Archive for 03/04/2012

اطلاعات کے مطا بق کراچی کے علاقہ برنس روڈ نزد حمزہ دواخانہ پر شرپسند عناصر سپاہ صحابہ، لشکرے جھنگوی اہلسنت والجماعت کے مسلح درندوں نے حملہ کر کے نوجوان، سید عابد نقوی کو شھیدکر دیا ۔ شھید کا جسد خاکی سول اسپتال منتقل کر دیا گیا ۔ مزید اطلاعات کے مطابق آج صبح کلئیرنگ ایجنٹ سید عابد نقوی کو شرپسند دهشتگردوں نے فائرنگ کرکے زخمی کردیا۔ جس کے بعد آپ کو فوری سول اسپتال منتقل کردیا گیا۔ جہاں آپ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے شھید ہوگئے۔ شھید رضویہ کے رہائشی تھے۔ اور عمر 38 سال بتائی جا رھی ہے .شہید کی میت رضویہ امام بارگاہ میں ہے شہید کی نماز جنازہ  بعد نماز مغرب ادا کی جائے گی، کیونکہ شہید عابد نقوی کے بھائی خیر پور سے شام کو کراچی پہنچے گے اس کے بعد نماز جنازہ اور تدفین کے مراحل اد کیے جائیں گے، رات 10:00بجے کے بعد تمام ملت کے مومنین سے شہید کے لیے نماز وحشت کی درخواست ہے. تازہ ترین اطلاعات کے مطابق کراچی میں گلشن اقبال کے علاقے پہلوان گوٹھ میں بھی ایک شیعہ اسکاوٹس کو فائرنگ کر کے شہید کر دیا گیا، کراچی کے تمام مومنین سے التماس ہے کہ صبر کا دامن ہاتھ سے نہ جانے دیں۔

Advertisements

سانحہ کوہستان کا زخم ابھی تازہ تھا کہ چلاس میں پھر بربریت کی انتہا کر دی گئی۔گلگت میں مظاہرین اور پولیس کے درمیان جھڑپوں کے نتیجے میں جانی نقصان اور زخمیوںکے واقعہ کے بعد چلاس میں سانحہ کوہستان کو دہرایا گیا۔17شیعہ مومنین کو بسوں سے اُتار کر شہید کردیا گیا ہے جبکہ بہت سے اسکول اورکالجوں کے طلبہ، طلبات اور اساتذہ اہلسنت و الجماعت سپاہ صحابہ، لشکرے جھنگوی کے اُن دہشتگردوں کے محاصرے میں ہیں۔6بسوں کو جلانے کے علاوہ 2بسوں کو دریائے سندھ میں گرادیا گیا ہے۔گلگت میں قانون نام کی کوئی چیز نہیں ہے، اور وزیر اعلی گلگت مہدی شاہ بھی اپنی زمہ داریوں سے کنارہ کشی کرتے ہوئے غیر ضروری دورے پر سندھ کے شہر گھڑی خدا بخش پہنچے ہوئے ہین، وہ بروز بدھ کو گلگت واپس آئین گے،اس کے بعد کوئی لائے عمل طے کریں گے، جب تک اہلسنت و الجماعت سپاہ صحابہ، لشکرے جھنگوی کے اُن دہشتگردوں کو مکمل آزادی ہے، یہاں ایک بات قابلے غور ہے کہ وزیر اعلی کا تعلق بھی شیعہ فرقہ سے ہے، اس کے باوجود اتنی لاپروائی۔ جبکہ دوسری طرف  دہشتگردوں کا دن دیہاڑے کھلے عام معصوم لوگوں کو اس طرح تشدد کر کے شہید کرنا حکومت کی ناکامی کا منہ بولتا ثبوت ہے۔حکومت فوری طور پر اہلسنت و الجماعت سپاہ صحابہ، لشکرے جھنگوی کے اُن دہشتگردوں   کیخلاف ایکشن لین سے کترارہی ہے، ان دہشتگردوں،قاتلوں، شرپسندوں اور ان کی پشت پناہی کرنے والوں کو بے نقاب کرنے مین ناکام ہو چکی ہے  امن و امان کی صورتحال کو بہتر بنانے کے لیے گلگت بلتستان کے تمام راستوں کی سیکورٹی کو مکمل یقینی بنایا جائے۔ سانحہ کوہستان میں معصوم لوگوں کو شہید کیے جانے کے بعد وزیرداخلہ نے اپنے بیان میں کہا تھا کہ ہم نے شاہراہ قراقرم روڈ پر سیکورٹی تعینات کر دی ہے۔ سیکورٹی کی تعینات کے باوجود ایسا واقعہ دوبارہ پیش آنا حیران کن ہے۔ امن وامان کے قیام کے ذمہ دار ادارے لوگوں کو تحفظ فراہم کرنے میں بری طرح ناکام ہوچکے ہیں۔ رپوٹ کے مطابق گلگت کے مظلوم شیعہ مومنین نے کہا کہ تسلسل سے گلگت کے امن کو خراب کرنے کی سازش ہو رہی ہے۔ سازشی عناصر گلگت میں مذہبی فسادات چاہتے ہیں۔سانحہ کوہستان بھی اسی عنصر کی ایک کڑی ہے۔ حکومت آج سانحہ کوہستان میں ملوث ملزموں اور ان کے سرپرستوںکو بے نقاب کرتی تو گلگت کے امن کو خراب کرنے کی کسی میں ہمت نہ ہوتی۔امن قائم نہ کر سکنا ذمہ داران کی ناکامی کا منہ بولتا ثبوت ہے۔انتظامیہ کو چاہیے کہ وہ شرپسندوں کوفوری گرفتار کر کے قانون کے مطابق سزا دلائیں۔

اطلاعات کے مطابق گلگت کے علاقے چلاس میں کالعدم سپاہ صحابہ کے دہشتگردوں نے بس میں فائرنگ کے نتیجے میں اب تک کی اطلاعات کے مطابق 12 شیعہ مومنین شہید ہوچُکے ہے۔ مزید اطلاعات کے مطابق کالعدم ملک دشمن جماعت کے دہشتگردوں نے آج پورے گلگت میں ہڑتال کی کال دی تھی۔ آج صبح سے ہی کالعدم سپاہ صحابہ کے دہشتگرد پورے شہر میں دندناتے نطر آرہے تھے البتہ سکیورٹی اداروں کی دہشتگردوں کی لگام دینے کی تمام تر کوشش ناکام نطر آئی۔ واضع رہے کہ دہشتگردوں کی فائرنگ سے اسکاوٹس کا شیعہ اہلکار بھی شہید ہوچُکا تھا۔ کالعدم سپاہ صحابہ کی حالیہ دہشتگردی میں مزید 12 شیعہ مومنین شہید ہوچُکے ہے۔ اطلاعات کے مطابق اتحاد چوک گلگت میں لشکر یزید نے گرنیڈ سے حملہ کردیا۔ جس کے نتیجہ میں دو عزادار زخمی ہوگئے۔جبکہ لالی محلہ میں فائرنگ سے شیراز ولد شیر افضل بھی زخمی ہوگئے۔جنہیں ڈی-ایچ-کیو اسپتال منتقل کردیا گیا۔ مزید اطلاعات کے مطابق لشکر یزید نے گلگت کے امن کو خراب کرنے کیلئے گلگت مین پر تشدد ہرتال کا اعلان کیا۔ جس کے بعد یزیدیوں نے کھلے عام فائرنگ اور حملوں کا سلسہ شروع کردیا۔ اور کرفیوں کے نفاذ کے باوجود شدید فائرنگ اور ھنگامہ آرائی کرکے گلگت کے امن کو سبو تاش کردیا۔جبکہ اتہائی افسوس ناک بات یہ ہیں کہ گلگت کے مسلح یزیدیوں نے فائرنگ کرکے تین سیکیورٹی ادارے کے اھلکاروں کو بھی زخمی کردیا۔ جو لشکر یزید کی درندگی اور وحشی ہونے کا منہ بولتا ثبوت ہیں۔ افسوس کہ رحمان ملک سانحہ کوہستان کے بعد شیعہ قوم سے کئیے جانے والے وعدوں کو تو آج تک پورا نہ کرسکا جس کے نتیجہ میں آج تک گلگت کا امن بحال نہ ہوسکا۔ دوسری طرف اس بات کا بھی قوی امکان ہےکہ ان دہشت گرد گروپس مین سعوی حمایت بافتہ طالباں کے افراد کثیر تعداد میں شامل ہیں جو کہ امریکی اور سعودی اشارہ پر یہ تمام دہشت گردی کررہے ہیں تاکہ مستقبل میں جین کے ساتھ معاملات کو خراب کیا جائے اور ایران پر حملہ کرنے کے لیے پاکستان کی سرزمین کو استعمال کرنے اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے مانے والے شیعہ مسلمانوں پر دباو بڑھایا جائے تاک کہ مستقبل میں ہونے والی ایران کے خلاف کسی بھی کاروائی میں سعودی اور امریکی مفادات کو نقصان نہ بہنچا سکیں

کالعدم اھلسنت والجمائت (سپاہ صحابہ) کے دھشتگردوں نے سید اصغر حسین جعفری ولد احمد جعفری پر حملہ کر دیا۔ جس کے نتیجہ میں آپ شھید ہوگئے اور آپ کو عباسی اسپتال منتقل کردیا گیا۔ مزید اطلاعات کے مطابق اصغر جعفری ولد احمد جعفری کو کالعدم سپاہ صحابہ کے دھشتگردوں نے ناظم آباد پر نشانہ بنایا اور آپ کے سینہ میں چار گولیاں ماری جبکہ آپ کی گاڑی کا نمنر ASS 510 ہیں۔ شھید سرجانی ٹاون کے رھائشی تھے۔ اور اپنی گاڑی میں اکیلے جارہے تھے۔ شھید ڈائیمنڈ سی-این-جی اسٹیشن میں بطور مینیجر اپنی خدمات انجام دے رہے تھے تھے۔ اور آپ پر حملہ تشیع کی اقتصادی طاقت پر حملہ تھا کراچی کے مومنوں:ملت کا مستقبل اب تمھارے حوالے  اگر شیعہ کلنگ نے ابھی تک آپ کی نظر میں کچھ اچھا کام کیا ہو تو اُس کے بدلےمیں آج آپ سے شیعہ کلنگ ایک چیز مانگتا ہے۔ وہ یہ کہ آج بعد نماز ظہرین انچولی امام بارگاہ میں شہید اصغر حسین کی نماز جنازہ میں ضرور شرکت کریں۔  سمجھدار کے لیے اشارہ کافی ہے کہ اگر کل جنازہ افرادی قوت کے لحاظ سے ناکام رہا تو شاید اب کبھی انچولی میں کسی شہید کا جنازہ نہیں آئے گا علماء کرام، ملت کے عہدیدار، انجمن اراکین، تنظیمی رہنما،شیعہ اداروں کے نمائندگان اور محترم خواص سے پرزور اپیل ہے کہ انچولی کے حالات کا نوٹس لے۔ آپ کی عدم شرکت سے “احساس لاوارث” ملت کے درمیان پیدا نہ ہوجائے

تہران: ایران کے وزیر خارجہ علی اکبر صالحی نے قومی یکجہتی کی تقویت پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ امریکا تمام راستے بند ہونے کی صورت میں اپنے ایران مخالف موقف سے پسپائی اختیار کرے گا، پاکستان نے اپنی سرزمین ایران کے خلاف استعمال نہ ہونے کی یقین دہانی کرائی ہے۔ایرانی ٹی وی کو انٹرویومیں ایرانی تیل پر پابندی سے گیارہ ممالک کو مستثنٰی قرار دینے کے امریکہ کے اقدام کے بارے میں پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ مغربی ممالک نے ایران کے سلسلے میں پسپائی نہیں کی ہے اور ہمارے خیال میں مغرب یہ یقین پیدا ہونے تک کہ ایران طاقتور ہے اپنا دباؤ ہمیشہ برقرار رکھے گا۔ ایرانی وزیرخارجہ نے کہا کہ جب مغرب کو یہ پتہ چلے گا کہ ایران اس کے مقابل ایک چٹان کی طرح کھڑا ہے اور اس کو نقصان پہنچانے کا کوئی امکان نہیں ہے تو پسپائی اختیار کر لے گا۔ علی اکبر صالحی نے کہا کہ یورپ کے جن بعض بڑے ممالک نے ہتھیاروں کے زور پر دیگر ممالک کو اپنے تسلط میں رکھا اب وہ اقتصاد کے ذریعہ ان ممالک پر اپنا تسلط چاہتے ہیں۔ان کا کہناتھاکہ پاکستان نے اپنی سرزمین ایران کے خلاف استعمال نہ ہونے کی یقین دہانی کرائی ہے۔انہوں نے کہاکہ ایران پاکستان کے ساتھ تعلقات کو قدر کی نگاہ سے دیکھتاہے اورایران کوپاکستان پر پورا بھروسہ ہے۔ علی اکبرصالحی نے کہاکہ ان کا ملک پاکستان میں جاری بحرانوں سے آگاہ ہے اوران بحرانوں کے حل کے لئے پاکستان کی بھرپورمددکرناچاہتے ہیں۔انہوں نے کہاکہ پاکستان سے آنیوالے وقتوں میں تعلقات مزیدمضبوط ہوں گے

واشنگٹن (آئی این پی) امریکی وزیر دفاع لیون پنیٹا نے کہاہے کہ امریکا کے پاکستان کے ساتھ تعلقات انتہائی پیچیدہ ہیں یہ ہمیشہ رہے اور مجھے خدشہ ہے کہ ہمیشہ رہیں گے، پاکستان اب بھی بھارت کو خطرہ سمجھتاہے جبکہ ہمیں اس موقف سے اختلاف ہے ، پاکستانی حکام اور اسامہ بن لادن کی محفوظ پناہ گاہ کے درمیان کسی رابطے کے کوئی شواہد نہیں لیکن پاکستانی اسٹیبلشمنٹ کس طرح اس کمپاوٴنڈکے بارے میں لاعلم رہی؟ یہ معاملہ تشویش کاباعث ہے ،اسامہ کی ہلاکت کے بعددنیامحفوظ ہوگئی ہے۔ امریکی ٹی وی سی بی سی کو دیئے گئے انٹرویو میں انہوں نے اعتراف کیاکہ پاکستان کے ساتھ تعلقات انتہائی پیچیدہ ہیں یہ ہمیشہ رہے اورمجھے خدشہ ہے کہ ہمیشہ رہیں گے۔ انہوں نے کہاکہ بعض حوالوں سے ہمیں مشترکہ تشویش اور مشترکہ خطرہ درپیش ہیں۔ دہشت گردی سے پاکستان اوراس کے عوام کوبھی اسی طرح خطرہ لاحق ہے جس طرح کہ امریکا اور افغانستان کے عوام کو خطرہ ہے۔ انہوں نے کہاکہ دونوں ممالک کے درمیان خطرے کے تصور پراختلاف ہے مسئلہ ہے کہ پاکستان بھارت کوبڑاخطرہ سمجھتاہے جس کے نتیجے میں بعض اوقات ہمیں پاکستان سے مبہم پیغامات ملتے ہیں۔ اسامہ کے خلاف ایبٹ آبادآپریشن کے حوالے سے انہوں نے کہاکہ ہم نے پاکستان کواس کی اطلاع نہیں فراہم کی کیونکہ ہمیں خدشہ تھاکہ وہ یہ معلومات افشاء کردیں گے جس سے ہم اپنامشن پورانہیں کرپائیں گے۔

رياض. . . .خليج تعاون کونسل نے رکن ممالک کے داخلي امورميں ممکنہ ايراني مداخلت کيپيش نظر ميزائل شکن نظام نصب کرنے کي تجويز کا جائزہ لينے کے لئے خليجي ممالک اور امريکا کي مشترکہ سيکيورٹي کميٹي قائم کردي ہے.سعودي اخبار کے مطابق يہ فيصلہ خليجي ممالک کے تحفظ کے لئے کيا گيا ہے. مشترکہ کميٹي امن و سلامتي کے ماہرين پر مشتمل ہوگي جو ميزائل شکن نظام نصب کرنے کي ضرورت اور اہميت کا فيصلہ کريں گے. امريکا نے يقين دہاني کرائي ہے کہ خليجي ممالک سے متعلق اس کے وعدے ٹھوس نوعيت کے ہيں. امريکا کسي بھي خطرے کے مقابلے کے لئے خليجي ممالک کي مشترکہ دفاعي تنصيبات کے استحکام ميں بھرپور تعاون کرے گا.

تازہ ترین صورتحال کے مظابق گلگت ميں کالعدم اہل سنت والجماعت کي حکومتي اقدامات کے خلاف شٹر ڈاون ہڑتال کا اعلان کرتے ہوئے، شہر کے مختلف علاقوں ميں ہوائي فائرنگ اور دستي بم کے حملے  کیے جس میں 5افراد جاں بحق اور 45 زخمي ہو گئے جبکہ علاقے ميں کرفيو نافذ کر ديا گيا ہے.اس کے علاوہ بسوں سے اتار کر 6 افراد کو ہلاک کردیا اور شہر کي مختلف سڑکوں کو ٹائر جلائے اور شدید فائرنگ کی ہے،، لوگوں کا کہنا ہے کہ ضلعي انتظاميہ اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کے اہلکارسڑکوں سے غائب ہيں اور جبکہ کالعدم اہل سنت والجماعت سپاہ صحابہ، لشکر جھنگوی کے مسلح دہشت گردوں کے گروہوں شہر کے مختلف شیعہ آبادی والے علاقوں پر ہوائي فائرنگ کررہے ہيں جس سے لوگوں ميں سخت خوف و حراس پھيل گيا ہے،اور گلگت میں فرقہ وارانہ فسادات شروع ہو گئے ہیں اور نظام زندگي بري طرح مفلوج ہے،اس دوران کالعدم اہل سنت والجماعت سپاہ صحابہ، لشکر جھنگوی کے مسلح دہشت گردوں  نے اتحاد چوک پر دستي بم بھي پھينک ديا . فائرنگ، دستي بم اور پتھروں سے کئے گئے حملوں ميں 5افراد ہلاک اور 45 زخمي بتائے جا رہے ہيں.اس کے علاوہ بسوں سے اتار کر 6 افراد کو ہلاک کردیا ہے علاقے ميں کرفيو نافذ کر ديا گيا ہے اور لوگوں سے گھروں ميں رہنے کا کہا جا رہا ہے تاہم کرفيو کے نفاذ کے باوجود بعض جگہوں سے کالعدم اہل سنت والجماعت سپاہ صحابہ، لشکر جھنگوی کے مسلح دہشت گرد تاحال فائرنگ کر رہے ہیں جس  کي آوازيں سنائي دے رہي ہيں.

کراچي کے علاقوں پاک کالوني اور رضويہ ميں نامعلوم افراد نے فائرنگ کي ہے جس کے بعد علاقے ميں خوف و ہراس پھيل گيا ہے اور دکانيں بند ہو گئي ہيں. ادھر اورنگي ٹاو?ن ميں فائرنگ کا ايک زخمي بھي چل بسا. گوليمار چورنگي پر نامعلوم افراد نے پتھراو? کر کے ٹريفک معطل کر ديا ہے.

کوئٹہ ميں اسپني روڈ اور ديگر مختلف واقعات ميں ہزارہ قبيلے سے تعلق رکھنے والے افراد کي ٹارگٹ کلنگ کے خلاف ہزارہ ڈيموکريٹک پارٹي کے زيراہتمام خواتين نے احتجاجي مظاہرہ کيا . بلوچستان اسمبلي کے باہر کئے گئے احتجاجي مظاہرے ميں خواتين نے پلے کارڈز اور بينرزکے علاوہ چوڑياں بھي اٹھائي ہوئي تھيں. انہوں نے ہزارہ برادري سے تعلق رکھنے والے افراد کي ٹارگٹ کلنگ کے خلاف شديد نعرے بازي کي اور اس موقع پر خواتين نے بڑي تعداد ميں چوڑياں اسمبلي کے باہر پھينکيں اور گيٹ کے پاس باندھ بھي ديں. ان کا مطالبہ تھا کہ ہزارہ قوم کي ٹارگٹ کلنگ بند کراو?، ان کا يہ بھي کہنا تھا کہ اگر حکومت انہيں تحفظ فراہم نہيں کرسکتي تو يہ چوڑياں ان کيلئے تحفہ ہيں. انہوں يہ بھي کہا کہ پہلے تو صرف ہزارہ برادري کے مردوں کو ٹارگٹ کيا جاتا تھا اب خواتين کو بھي نشانہ بنايا جارہا ہے.