Archive for 09/03/2012

سانحہ کوہستان کے بعد آغا راحت حسینی کی جانب سے دی جانے والی ڈیڈ لائن کے آخری دن آج مرکزی انجمن امامیہ کا اجلاس گلگت میں آغا راحت حسینی کی صدارت میں ختم ہوگیا۔ اطلاعات کے مطابق اجلاس میں ڈیڈ لائن کے ختم ہونے کے بعد لا ئحہ عمل طے کیا گیا جس کا اعلان آج بعد نماز ظہر کیا جانا تھا۔  دوران اجلاس وزیر داخلہ رحمان ملک نے آغا راحت حسینی سے ٹیلی فون پر بات چیت کی اور ایک دن کی مہلت مانگی جس پر متفقہ طور پر حکومت کو مزید ایک دن کی مہلت دے دی گئی ہے۔ نمائندے کی اطلاعات کےمطابق سانحہ کوہستان کے بعد سے گلگت بلتستان میں تا حال کشیدگی برقرار ہے ۔ نمائندے نے مزید بتایا کے کل تک کی مہلت ملنے کے بعد حکومت کی طرف سے عملی اقدام کا انتظار کیا جائے گا اور پھر آئندہ کے لائحہ عمل کا عوام کے سامنے کل اعلان کیا جائے گا۔ نمائندے کیمطابق اس بات کا بھی امکان ہے کہ اگر حکومت کی طرف سے مطالبات پر اقدامات نہ کئے گئے تو کل گلگت میں سول نافرمانی کی تحریک کا اعلان کر دیا جائے۔ آغا راحت حسین الحسینی کی صدارت میں علما و عمائدین گلگت و بلتستان کا بند کمرہ اجلاس اختتام پذیر هو چکا هے ، دوران اجلاس رحمان ملک وفاقی وزیر داخلہ نے ٹیلی فونک رابطہ کے ذریعے وفد سے مذاکرات کرتے هوئے کها که سانحہ کوہستان کے قاتلوں کا سراغ لگا لیا گیا ہے آج موسم کی خرابی کی وجہ سے گلگت نہیں پہنچ سکتا کل آکر آپ سے ملاقات کرکے اعلان کرونگا، آپکے تمام مطالبات پر عمل درآمد ہوگا، بعد از آن ملت جعفریہ گلگت بلتستان کی ۸ رکنی ’’مشترکہ سپریم کونسل‘‘ کی تشکیل کا اعلان کیا گیا هے ، علامہ شیخ حسن جعفری امام جمعہ و الجماعت اسکردو اور علامہ سید راحت حسین الحسینی امام جمعہ والجماعت گلگت کی سرپرستی ہوگی ۔جبکه کل تک کی مہلت کا اعلان کیا گیا هے ، تمام نوجوانوں کو مرکز سے مربوط رہنے کی ہدایت دیتے ہیں واضح رہے کہ سانحہ کوہستان میں گلگت جانے والی بس کو روک کر سفاک دہشت گردوں نے مومن مسافروں کو نیچے اتار کر شہید کردیا تھا جن کی تعداد ۱۸ تھی۔

ضلع تربت کی سب تحصیل مندبلو میں بس اڈے پر ایران سے آنے والے افراد پرنامعلوم شدت پسندوں نے اندھا دھند فائرنگ کر دی جس سے وہاں پر موجود 5 افراد جاں بحق ہو گئے جن میں 2 کی شناخت ہو گئی۔ جاں بحق ہو نے والوں میں ریاض احمد اور گلزار احمد شامل ہیں جبکہ 4 افراد زخمی ہوگئے۔ زخمیوں میں فیاض‘ شفیق‘ اعجاز‘ اوراحسان شامل ہیں۔ زخمیوں میں بعض کی حالت بہت تشویشناک ہے -عینی شاہدین کے مطابق حملہ آور موٹر سائیکل پر سوار تھے۔ جو حملہ کرنے کے بعد فرار ہونے میں کامیاب ہو گئے. واقعہ کے بعد سکیورٹی فورسز نے علاقے کو گھیرے میں لے کر ملزمان کی تلاش شروع کر دی۔ واقعہ میں جاں بحق افراد کی لاشوں کو ہسپتال میں داخل کرا دیا گیا ہے. اطلاعات کے مطابق پنجاب کے مختلف علاقوں ساہیوال ‘سیالکوٹ اور دیگر علاقوں سے ایک گروپ ہمسایہ ملک ایران زیارت کیلئے گیا تھا۔

فلسطین میں مسجد اقصیٰ کی تعمیرو مرمت کی ذمہ دار تنظیم” اقصیٰ فاؤنڈیشن” نے قبلہ اول کی دیوار براق کی تاریخ مسخ کرنے کی ایک نئی صہیونی سازش کا انکشاف کیا ہے۔ اقصیٰ فاؤنڈیشن کی رپورٹ کے مطابق اسرائیل میں سرگرم ایک انتہا پسند یہودی گروپ نے امریکا کے شہر نیویارک کی بروکیلن کالونی میں قائم میوزیم میں دیوار براق جسے یہودی دیوار مبکی کے نام سے جانتے ہیں کا ایک قوی ہیکل مجسمہ نصب کیا ہے۔ رپورٹ کے مطابق بدھ کے روز دیواربراق کے اس نام نہاد مجسمے کی تنصیب کی افتتاحی تقریب کے موقع پر اسرائیل کا ایک وزیر بھی موجود تھا۔ اقصیٰ فاؤنڈیشن نے انتہا پسند یہودیوں کی جانب سے دیوار براق کے ڈھانچے کی امریکا میں تنصیب کو مسجد اقصیٰ کی تاریخ مسخ کرنے کی ایک سنگین سازش قرار دیا ہے۔ اقصیٰ فاؤنڈیشن و ٹرسٹ کی جانب سےجاری بیان میں کہا گیا ہے کہ اسرائیل دیوار براق کو مسجد اقصیٰ کا حصہ قرار دینے کے بجائے اسے قبلہ اول سے الگ اور مذموم ہیکل سلیمانی کا حصہ قرار دینے کی مہم چلا رہا ہے۔ امریکا میں یہودی گروپ کی جانب سے دیوار براق کا ہیکل تعمیر کر کے مسجداقصیٰ کی تاریخ اور حقیقت کو مسخ کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔ بیان میں کہاگیا کہ دیواربراق مسجد اقصیٰ کا تاریخی حصہ ہے۔ اسرائیل اور یہودیوں کے اس پر دعوے قطعی بے بنیاد اور خرافات ہیں، جن میں ذرا برابر بھی صداقت نہیں ہے۔