فلموں میں سیکس اور شراب نوشی دیکھنے والے نوجوان دوگنا زیادہ سیکس اور شراب نوشی کرتے ہیں،سروے

Posted: 23/02/2012 in All News, Important News, Survey / Research / Science News, USA & Europe

امریکہ اور یورپ میں مختلف عمروں کے افراد اور نوجوانوں جو ایسی فلمیں بہت زیادہ دیکھتے ہیں جن میں بھرپور بے راہ روی اور اخلاقی انحطاط (سیکس) اور شراب نوشی دکھائی جاتی ہے عام لوگوں سے دو گنا زیادہ سیکس اور شراب نوشی کرتے ہیں۔ ماہرین نے 6500 افراد اور نوجوانوں سے چار مرتبہ سے زیادہ سوال کیا کہ کیا انہوں نے 50 فلموں میں سے کوئی فالم دیکھی ۔ ان  افراد اور ٹین ایجرز سے یہ سوال بھی کیا گیا کہ کیا انہوں نے اپنے والدین سے چھپ کرسیکس فلمیں دیکھیں ہیں اور شراب نوشی کی نیز کب سے انہوں نے ایک ساتھ کم ازکم پانچ جام پینا شروع کئے۔اس کے بعد ان سے سیکس فلموں کا اور شراب نوشی کے استعمال کے نقطہ نظر سے تجزیہ کیا گیا۔ مطالعہ کے مطابق ان نوجوانوں نے ان فلموں میں راہ روی اور اخلاقی انحطاط (سیکس) اور  شراب نوشی کے مناظر کم از کم ساڑھے چار گھنٹے دیکھے اور ان میں سے بعض نے آٹھ گھنٹے سے بھی زیادہ یہ مناظر دیکھے۔ اس مطالعہ میں اس کا جائزہ بھی لیا گیا کہ والدین کی جانب سے اہل خانہ کو راہ روی اور اخلاقی انحطاط (سیکس) سے نہ روکنے اور شراب نوشی کا اولادوں پر کیا اثر پڑتا ہے۔11 فیصد افراد اور نوجوانوں نے بتایا کہ سیکس کرنے کے لیے مختلف کمپنیز کے سیکسی گفٹس اور فری کنڈوم کے سیمپلز اور شراب کے ساتھ ملنے والے گفٹس مثلا بیئر کی بوتل والی شرٹس انکے پاس موجود ہیں۔ 23 فیصد کے مطابق ان کے والدین ہفتے میں کم از کم ایک مرتبہ گھر میں ان کے سامنے شراب پیتے ہیں۔دو سال کے عرصے پر محیط اس سروے میں دیکھا گیا کہ راہ روی، اخلاقی انحطاط (سیکس) اور شراب نوشی کرنے والے افراد اور نوجوانوں کا تناسب 11 فیصد سے بڑھ کر 25 فیصد ہوگیا۔جبکہ بنج ڈرنکنگ کرنے والے نوجوانوں کا تناسب تین گنا ہو گیا۔ راہ روی اور اخلاقی انحطاط (سیکس) والی اور شراب نوشی دکھانے والی فلمیں دیکھنے والے 63 فیصد افراد اور نوجوان عام افراد سے زیادہ سیکس اور بنج ڈرنکنگ کرتے ہیں۔جس کی وجہ سے کئی قسم کی بیماریاں جنم لے رہی ہیں     

Comments are closed.