ہانس بلیکس: ایران اپنے خلاف کسی فوجی کارروائی پر تماشا نہیں دیکھے گا بلکہ منہ توڑ جواب دے گا

Posted: 11/02/2012 in All News, Breaking News, Important News, Iran / Iraq / Lebnan/ Syria, Survey / Research / Science News, USA & Europe

بین الاقوامی ایٹمی ایجنسی کے سابق انسپکٹر نے کہا ہ ےکہ ایرانی اپنے ملک کا دفاع کرنے میں بہت ہی سنجیدہ ہیں اور وہ اپنے خلاف کسی فوجی کارروائی پر تماشا نہیں دیکھیں گے بلکہ منہ توڑ جواب دیں گے، ایران کے خلا ف فوجی کارروائی سے علاقہ میں عدم استحکام اور بحران پیدا ہوجائےگی جس کی ذمہ داری امریکہ اور مغربی ممالک پر عائد ہوگیرپورٹ کے مطابق بین الاقوامی ایٹمی ایجنسی کے سابق انسپکٹر اور سربراہ ہانس بلیکس نے رشیا ٹو ڈے سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہےکہ ایرانی لوگ اپنے ملک کا دفاع کرنے میں بہت ہی سنجیدہ ہیں اور وہ اپنے خلاف کسی فوجی کارروائی پر تماشا نہیں دیکھیں گے بلکہ منہ توڑ جواب دیں گے، ایران کے خلا ف فوجی کارروائی سے علاقہ میں عدم استحکام اور بحران پیدا ہوجائےگا جس کی ذمہ داری امریکہ اور مغربی ممالک پر عائد ہوگی۔ انھوں نے کہا کہ امریکہ اور اسرائيل میں انتہا پسندوں کی دھمکیوں سے ایران اپنے پرامن ایٹمی پروگرام کو ہرگز ترک نہیں کرےگا کیونکہ پرامن ایٹمی ٹیکنالوجی بین الاقوامی قوانین کی روشنی میں ایران کا حق ہے اور ایرانی اس سلسلے میں اپنی کوشش جاری رکھیں گے۔ اس نے کہا کہ میرا یقین ہے کہ ایران کے پاس ایٹمی ہتھیار نہیں اور نہ ہی ایران  ایٹمی ہتھیار بنانے کا خواہاں ہے اور بین الاقوامی ایٹمی ایجنسی کی حالیہ رپورٹ میں بھی ایسے شواہد موجود نہیں ہیں ۔ اس نے کہا کہ ایران پر فوجی حملے کی صورت میں علاقہ میں عدم استحکام اور بحران پیدا ہوجائے جس کے پوری دنیا پر منفی اثرات پڑیں گے۔

Comments are closed.