پاکستان میں امریکی سفیر پاک ایران گیس منصوبے کے پیچھے ہاتھ دھو کر پڑ گئے

Posted: 28/01/2012 in Afghanistan & India, All News, Breaking News, Local News, Pakistan & Kashmir, USA & Europe

ذرائع کے مطابق امریکہ نے بھارت کو آمادہ کر لیا ہے کہ وہ پاکستان کو ایران کی نسبت سستی گیس فراہم کرے گا جبکہ امریکہ نے اپنی طرف سے بھی گیس دینے کی پیش کش کر دی ہے۔امریکہ نے پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبے کو روکنے کیلئے پاکستان کو سستی گیس فراہم کرنے کی پیش کش کرتے ہوئے مشورہ دیا ہے کہ ایران سے گیس حاصل کرنے کی بجائے ترکمانستان سے گیس حاصل کرنے کے منصوبے پر توجہ دی جائے۔ ذرائع کے مطابق پاک ایران گیس منصوبہ رکوانے کیلئے پاکستان میں امریکی سفیر کیمرون منٹر اور دیگر سفارتکار سرگرم ہو گئے ہیں اور انھوں نے بجلی و توانائی کے شعبے سے متعلق پاکستانی حکام سے ملاقاتیں شروع کر دی ہیں۔ ذرائع کے مطابق امریکی سفارتکار پاکستانی حکام کو باور کرانے کی کوشش کر رہے ہیں کہ ایرانی گیس پاکستان کیلئے بہت مہنگی ہے، کیونکہ ایرانی گیس کی قیمت فی ایم ایم بی ٹی یو 12 ڈالر ہے، جبکہ ایل این جی 18ڈالر فی ایم ایم بی ٹی یو ہے، اس کے مقابلے میں امریکی حکام پاکستان کو ترکمانستان، افغانستان، پاکستان، بھارت گیس پائپ لائن منصوبے پر کام کیلئے دباو ڈال رہے ہیں، اس منصوبے پر بات چیت کیلئے ہی پاکستانی وزیر پیٹرولیم ڈاکٹر عاصم حسین اس وقت بھارت میں موجود ہیں۔ امریکی حکام نے پاکستان میں گیس کے موجودہ بحران پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے مدد فراہم کرنے کا عندیہ بھی دیا ہے۔ ذرائع کے مطابق امریکی ادارے یو ایس ایڈ کے حکام نے وزارت پیٹرولیم کے عہدیداران سے ملاقات کرتے عندیہ دیا ہے کہ وہ پاکستان کو ساڑھے 4 ڈالر فی ایم ایم بی ٹی یو ایل این جی فراہم کر سکتے ہیں، یہ وہ قیمت ہے جو 4 یا 5 سال پہلے عالمی مارکیٹ میں تھی۔ امریکی سفارتکاروں نے پاکستان کو اپنے پاس سے بھی گیس فروخت کرنے کی پیشکش کی ہے اور اس کی قیمت 4 ڈالر ایم ایم بی ٹی یو اور ٹرانسپورٹیشن کے اخراجات 3 سے 4 ڈالرز فی ایم ایم بی ٹی یو کا عندیہ دیا ہے۔ ادھر بھارت سے بھی اطلاعات ہیں کہ بھارت نے پاکستان کو ایران کی نسبت سستی گیس فراہم کرنے کی پیش کش کی ہے اس حوالے سے پاکستانی وزیر توانائی ڈاکٹر عاصم حسین اور ان کے بھارتی ہم منصب نے مشترکہ پریس کانفرنس کی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ اگر پاکستان ایران سے گیس نہ لے تو بھارت اس کی مدد کر سکتا ہے اس حوالے سے آئندہ ہفتے تمام معاملات بھی طے کر لینے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

Comments are closed.