معلوم ہوتا ہے کہ کراچی میں دہشتگردوں اور فرقہ پرستوں کا مکمل راج ہے، علامہ رمضان توقیر

Posted: 28/01/2012 in All News, Important News, Local News, Pakistan & Kashmir, Religious / Celebrating News

ایس یو سی خیبر پختونخوا کے سربراہ کا کراچی میں ایک ہی خاندان کے تین وکلاء کے قتل کی پرزور مذمت کرتے ہوئے کہنا تھا کہ شہر قائد میں آئے روز ٹارگٹ کلنگ کے واقعات صوبائی اور مرکزی حکومت کی نااہلی اور بے بسی کی طرف اشارہ کر رہے ہیں۔شیعہ علماء کونسل خیبر پختونخوا کے سربراہ علامہ محمد رمضان توقیر نے کراچی میں 3 وکلاء کی شہادت پر شدید ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ایسا معلوم ہوتا ہے کہ شہر قائد میں دہشتگردوں اور فرقہ پرستوں کا مکمل راج ہے، آئے روز ٹارگٹ کلنگ کے واقعات صوبائی اور مرکزی حکومت کی نااہلی اور بے بسی کی طرف اشارہ کر رہے ہیں، اسلام ٹائمز کے ساتھ خصوصی بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یکم محرم الحرام سے اب تک روزانہ کی بنیاد پر اہل تشیع کو چن چن کر مارا جا رہا ہے، لیکن حکمران حسب معمول خاموشی کی تصویر بنے بیٹھے ہیں، اور دہشتگردوں کو کھلی چھٹی دے رکھی ہے، انہوں نے کہا کہ اگر کراچی سمیت ملک کے مختلف شہروں میں ملت تشیع کے افراد یونہی نشانہ بنتے رہے تو صورتحال حکمرانوں کیلئے بھی ناقابل برداشت ہو سکتی ہے۔ علامہ رمضان تو قیر نے مزید کہا کہ کالعدم تنظیموں کے بدنام زمانہ دہشتگردوں کی آزادانہ نقل حرکت باعث تشویش ہے، اور اسی وجہ سے کراچی میں فرقہ واریت کے واقعات پیش آ رہے ہیں، انہوں نے ایڈووکیٹ بدر منیر جعفری، ان کے بیٹے شکیل جعفری اور بھتیجے کفیل جعفری کی شہادت پر ان کے اہل خانہ سے اظہار ہمدردی کرتے ہوئے کہا کہ اس واقعہ کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے، انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ ان تینوں شہداء کے قاتلوں سمیت دیگر اہل تشیع کے قاتلوں کو فوری طور پر گرفتار کیا جائے اور انہیں عبرت ناک سزائیں دی جائیں۔

Comments are closed.