ایرانی سرحدی محافظوں نے چھ پاکستانی تاجروں کو ہلاک کر دیا

Posted: 28/01/2012 in All News, Breaking News, Important News, Iran / Iraq / Lebnan/ Syria, Pakistan & Kashmir

پاکستانی حکام نے کہا ہے کہ ایرانی سکیورٹی محافظوں نے چھ پاکستانی تاجروں کو ہلاک کر دیا ہے۔ یہ چھ پاکستانی تاجر جمعرات کے دن اپنی بکریوں کے ساتھ ایرانی سرحد میں داخل ہوئے تھے۔ خبر رساں ادارے اے پی نے بتایا ہے کہ پاکستانی حکام کے اس دعویٰ کے جواب میں ایرانی حکام نے فوری طور پر اس پر کوئی تبصرہ نہیں کیا ہے۔ پاکستانی بندرگاہی شہر گوادر کے ڈپٹی کمشنر عبدالرحمان نے بتایا ہے کہ یہ واقعہ جمعرات کو پیش آیا۔ ان پاکستانی تاجروں کو اس وقت ایرانی سکیورٹی گارڈ نے مبینہ طور پر ہلاک کیا، جب وہ گوادر سے ملحقہ ایرانی سرحد پار کر کے ہمسایہ ملک میں داخل ہوئے۔ عبدالرحمان نے امریکی نیوز ایجنسی اے پی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ایرانی حکام ہلاک شدگان کی لاشیں پاکستان کے حوالے نہیں کر رہے ہیں۔ انہوں نے اس واقعہ پر مزید تبصرہ کرنے سے انکار کر دیا۔ سیاسی تجزیہ نگاروں کے بقول اس واقعہ کی صداقت ثابت ہو جانے کے باوجود تہران اور اسلام آباد کے تعلقات میں خرابی کا کوئی امکان نہیں ہے۔ پاکستان اور ایران کے مابین دو طرفہ تعلقات طویل المدتی بنیادوں پر ہیں اور اس کا ایک اہم عنصر علاقائی سلامتی کو تصور کیا جاتا ہے۔ایران اور پاکستان کی سرحدوں پر اس طرح کے واقعات پہلے بھی رونما ہوتے رہے ہیں۔ رواں ماہ کے آغاز میں تین ایرانی سکیورٹی فورسز نے مبینہ طور پر پاکستانی سرحدی علاقے ماشکیل میں داخل ہو کر ایک پاکستانی کو ہلاک کر دیا تھا۔ پاکستانی سکیورٹی فورسز نے اگرچہ ان تینوں ایرانی سرحدی محافظوں کو گرفتار کر لیا تھا تاہم بعد ازاں مقتول کے گھر والوں سے ایک ڈیل کے نتیجے میں ان رہاکر دیا گیا تھا۔ پاکستان اور ایران کے سرحدی علاقوں میں اسمگلنگ کے واقعات بہت زیادہ ہوتے ہیں اور اسی لیے وہاں پر تشدد واقعات بھی رونما ہوتے رہتے ہیں۔ پاکستانی اور ایرانی حکام نے سرحد پار اسمگلنگ روکنے کے لیے متعدد اقدامات اٹھائے ہیں لیکن ابھی تک کوئی نتیجہ خیز پیشرفت نہیں ہوئی ہے۔

Comments are closed.