مشرف، وطن واپسی کیلئے عرب ممالک سے رابطے

Posted: 23/01/2012 in All News, Important News, Pakistan & Kashmir, Saudi Arab, Bahrain & Middle East

رباط /ریاض: پاکستان کے سابق صدر اور آل پاکستان مسلم لیگ کے سربراہ جنرل (ر) پرویز مشرف نے وطن واپسی کی راہ ہموار کرنے کیلئے عرب ممالک کے حمایت کیلئے رابطے شروع کر دیئے ہیں۔ وہ گذشتہ روز لندن سے اردن پہنچ گئے ہیں اور اس کے بعد سعودی عرب سمیت دیگر عرب ممالک میں بھی جائیں گے جہاں وہ مقامی قیادت سے اپنی وطن واپسی کیلئے حمایت حاصل کرنے کی کوشش کریں گے۔ اردن میں وہ مقامی فرمانروا شاہ عبداللہ دوئم سے ملاقات کریں گے۔ ان کے اس دورے کا مقصد وطن واپسی کے حوالے سے بین الاقوامی حمایت حاصل کرنا ہے۔ سابق صدر اردن کے بعد سعودی عرب بھی جائیں گے جہاں وہ سعودی فرمانروا خادم حرمین شریفین شاہ عبداللہ بن عبدالعزیز اور دیگر رہنمائوں سے ملاقات کریں گے۔ پرویز مشرف وطن واپسی کی راہ ہموار کرنے کے لیے عرب ممالک کا دورہ کر رہے ہیں۔ پرویز مشرف نے ستائیس سے تیس جنوری تک وطن واپسی کا اعلان کر رکھا ہے لیکن ملک میں ان کے بعض بہی خواہ انہیں واپس نہ آنے کا مشورہ دے رہے ہیں کیونکہ اہم حکومتی عہدیداران یہ کہہ چکے ہیں کہ مشرف واپس آئے تو انہیں کراچی ایئرپورٹ سے ہی گرفتار کر کے لانڈھی جیل بھیج دیا جائے گا جبکہ بعض حکومتی رہنما بشمول میاں رضا ربانی مشرف کے خلاف آئین کے آرٹیکل چھ کے تحت کارروائی کا مطالبہ کر رہے ہیں جس کی سزا موت ہے۔

Comments are closed.