صدر پردباوکم کرنے کيلئے گيلاني استعفي دينے پرغور۔۔۔۔۔،رپورٹ

Posted: 15/01/2012 in All News, Breaking News, Important News, Local News, Pakistan & Kashmir

لندن…ايک برطانوي اخبار نے دعوي کيا ہے کہ صدر زرداري پر دباو? کم کرنے کے ليے وزير اعظم يوسف رضا گيلاني استعفي? دينے پر غور کر سکتے ہيں. اخبار نے بعض مبصرين کي يہ پيش گوئي نقل کي ہے کہ وزيراعظم گيلاني استعفي? پر غور کرسکتے ہيں تاکہ صدرزرداري پرسے دباو? کم ہو جائے اورزرداري کي زيرقيادت حکومت اخلاقي فتح حاصل کرسکے. اخبار کے مطابق صدرزرداري نے معروف وکيل، عدليہ بحالي تحريک کے سرخيل اورپي پي کے رہنما اعتزاز احسن سے کہا ہے کہ عدليہ سے خفيہ مذاکرات کئے جائيں، اعتزاز احسن کو گيلاني کي جگہ وزيراعظم بنانے کا امکان بھي ظاہر کياگيا ہے. برطانوي اخبار نے ايک پاکستاني فوجي افسر کے حوالے سے انکشاف کيا ہے کہ جنرل صرف اس وقت آگے آئيں گے جب ملک کے اعلي? ترين جج اس کے لئے کہيں گے. اخبار کا کہنا ہے کہ في الوقت پاکستان ميں بغاوت کا کوئي امکان نہيں، فوج پيپلزپارٹي کو سياسي شہيد بننے کا موقع نہيں دينا چاہتي.. صدر زرداري نے اعتزاز احسن کو عدليہ سے خفيہ مذاکرات کيلئے کہا ہے،اعتزاز کو گيلاني کي جگہ وزيراعظم بنائے جانے کا امکان ظاہر کياگيا ہے..اخبار نے فوجي افسر کے حوالے سے لکھا ہے کہ فوج جمہوريت اورملک کے آئين پر يقين رکھتي ہے، اوراگر سول حکام عدالتي احکامات پر عملدرآمد ميں ناکام رہے تو ہم عدالت کے حکم کو نافذ کرنے ميں مدد پر غور کريں گے، اخبار کا کہنا ہے کہ ان الفاظ کا مطلب پاکستاني فوج کي جانب سے يہ پہلا واضح اشارہ ہے کہ فوجي جنرلز سپريم کورٹ کے احکامات پر عملدرآمد کريں گے، اگر انہيں آرٹيکل 190کے تحت سپريم کورٹ کے فيصلے پر عمل ميں مدد کے لئے کہاگ

Comments are closed.