خفیہ اداروں کی خصوصی رپوٹ:جیلوں سے سپاہ صحابہ کے دہشتگردوں اور جرائم پیشہ افراد رہی کے بعد کالعدم تنظیموں میں شامل

Posted: 09/01/2012 in All News, Articles and Reports, Breaking News, Educational News, Important News, Local News, Pakistan & Kashmir, Religious / Celebrating News, Survey / Research / Science News

جرائم پیشہ افراد جیلوں سے رہا ہونے کے بعد کالعدم ناصبی دہشت گرد ملت اسلامیہ، غازی فورس ،لشکر اسلام اور بلوچستان لبریشن آرمی جیس دہشت گرد تنظیموں میں شامل ہو رہے ہیں، رپورٹ کے مطابق پاکستانی خفیہ اداروں نے اپنی ایک رپوٹ میں تصدیق کی ہے کہ مختلف مقدمات میں ملوث جرائم پیشہ افراد رہائی کے بعد کالعدم تنظیموں میں شامل ہورہے ہیں اور ان کی شمولیت سے کالعدم ناصبی دہشت گردگروہ سپاہ صحابہ،لشکر جھنگوی اور دیگر مضبوط ہو رہے ہیں۔ برطانوی خبر رساں ادارے کے مطابق خفیہ اداروں کی جانب سے وزارت داخلہ کو بھیجی جانے والی اپنی رپورٹ میں اُن چار دہشت گرد کالعدم تنظیموں کی نشاندہی کی گئی ہے جس میں چھوٹے مقدمات یعنی چوری ،ڈکیتی ،اغواء برا ئے تاوان میں ملوث جرئم پیشہ افراد رہائی کے بعد شمولیت اختیار کر رہے ہیں ۔ ان میں ملت اسلامیہ پاکستان (کالعدم دہشت گرد گروہ سپاہ صحابہ)،غازی فورس ، لشکر اسلام اور بلوچستان  لبریشن آرمی شامل ہیں۔ رپورٹ کے مطابق ان کالعدم دہشت گرد تنظیموں میں سب سے زیادہ افرادصوبہ پنجاب اور خیبر پختونخوا ہ کی جیلوں سے رہائی کے بعد شامل ہو رہے ہیں جبکہ صوبہ بلوچستان کی مچھ جیل سے رہائی پانے والوں میں سے اکثریت بلوچستان لبریشن آرمی میں شامل ہورہی ہے۔ وزارت داخلہ کے ایک اہلکار نے اپنا نام نہ ظاہر کرنے کی شرط پر خبر رساں ادرے کو بتایا کے اس خفیہ اداروں کی طرف سے بھیجی جانے والی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ان افراد کے دہشت گرد گرہوں میں شمولیت کی بڑی وجوہات میں سے ایک وجہ یہ بھی ہے کہ جیل کے قوائد و ضوابط پر عمل نہ کرنا ہے اور اس کے علاوہ ان مجرموں کو یہ یقین دہانی کرانا ہے کہ ان کے مقدمات کو ختم کروانے کا دعویٰ جبکہ ان افراد کی رہائی کے بعد مقامی پولیس کی جانب سے اُن کی سرگرمیوں پر نطر نہ رکھنا بھی شامل ہے۔ جیل کے قوائد و ضوابط میں یہ واضح طور پر لکھا گیا تھا کے چھوٹے اور معمولی جرم میں ملوث افراد کو جرائم پیشہ اور شدت پسندی کی وارداتوں کے مقدمات میں گرفتار ہونے والے افراد کے ساتھ نہ رکھا جائے زرائع کے مطابق رپورٹ میں اس بات کا بھی ذکر کیا گیا ہے کہ ان افراد میں سے اکثریت کا کہنا تھا کہ جیل میں کالعدم تنظیموں سے تعلق رکھنے والے افراد کے رہن سہن کو دیکھتے ہوئے اور اس علاقے میں اُن کا اثر و رسوخ دیکھتے ہوئے ان گروپوں میں یہ افراد شامل ہورہے ہیں۔ خفیہ اداروں نے وزارت داخلہ کو بھیجی جانے والی اپنی رپورٹس میں کہا ہے کہ مختلف مقدمات میں ملوث سپاہ صحابہ، لشکر جھنگوی، طالبان کے افراد جیل سے رہائی کے بعد کالعدم شدت پسند تنظیموں میں  شمولیت اختیار کر رہے ہیں۔ ان افراد کی شمولیت سے یہ گروپ مضبوط ہو رہے ہیں۔ رپورٹ کے مطابق ان کالعدم تنظیموں میں سب سے زیادہ افراد صوبہ پنجاب اور خیبر پختونخوا کی جیلوں سے رہائی کے بعد شامل ہو رہے ہیں ذرائع کے مطابق ان رپورٹس میں کہا گیا ہے کہ اس وقت ملک کے مختلف علاقوں سے چار سو سے زائد مشتبہ افراد کو قانون نافذ کرنے والے اداروں نے گرفتار کیا جن سے ابتدائی تفتیش کے دوران اس بات کا انکشاف کیا ہے کہ وہ کچھ عرصہ قبل ہی جیل سے رہا ہوئے تھے اور قید کے دوران اُن کا زیادہ تر وقت شدت پسندی کے مقدمات میں گرفتار ہونے والے افراد کے ساتھ گُزرا۔ یاد رہے کہ وزیر داخلہ رحمان ملک نے بھی اس بات کا اعتراف کیا تھا کہ جرائم پیشہ عناصر جیل کے اندر سے ہی اپنی کارروائیاں جاری رکھے ہوئے ہیں اور اس ضمن میں ایک کمیٹی بھی تشکیل دی گئی تھی جو تمام معاملات کا جائزہ لے گی لیکن تاحال اس کمیٹی نے ابھی تک کام شروع نہیں کیا۔

Comments are closed.