صدر کی ممکنہ رخصتی، وزیراعظم کا اسمبلی توڑ کر ساتھ جانے کا فیصلہ

Posted: 23/12/2011 in All News, Articles and Reports, Breaking News, Educational News, Important News, Local News, Pakistan & Kashmir

اسلام آباد(طارق عزیز)وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی نے صدر زرداری کی رخصتی کی صورت میں فاروق لغاری بننے کی بجائے اسمبلیاں توڑ کر صدر کے ساتھ عوام میں جانے کا فیصلہ کیا ہے۔ وزیراعظم گیلانی نے کہا ہے کہ ساتھ آئے تھے ساتھ جائیں گے۔ اگر کسی سازش کے تحت صدر مملکت کو عہدہ سے فارغ کیا جاتا ہے تو وہ وزیراعظم رہنے کی بجائے اسمبلیاں توڑ کر حکومت ختم کرنے کو ترجیح دیں گے اور اپنا مقدمہ لے کر عوام کے پاس جائیں گے۔ اوصاف ذرائع کو معلوم ہوا ہے کہ صدر زرداری اور وزیراعظم گیلانی کے درمیان طویل ملاقات میں یہ بات زیر غور آئی کہ اگر مقتدر حلقے یا عدلیہ کی طرف سے صدر زرداری کو عہدے سے فارغ کیا جاتا ہے تو اس صورت میں حکومت کی حکمت عملی کیا ہوگی۔ وزیراعظم گیلانی نے واضح کیا ہے کہ اس صورت میں وہ فاروق لغاری بننے کی بجائے اسمبلیاں توڑ کر حکومت ختم کر دیں گے اور نئے مینڈیٹ کیلئے عوام سے رجوع کریں گے۔ ذرائع کو معلوم ہوا ہے کہ وزیراعظم گیلانی کو یہ پیشکش کی جا رہی ہے کہ صدر زرداری کی ایوان صدر سے رخصتی کی شکل میں وہ وزیراعظم رہ سکتے ہیں اور حکومت جاری رکھ سکتے ہیں۔ پیپلزپارٹی زرداری کی جگہ کسی اور شخصیت جو صاف ستھری کردار کی حامل ہو انہیں صدر مملکت بنایا جا سکتا ہے۔ اوصاف کو معلوم ہوا ہے کہ وزیراعظم گیلانی نے یہ پیشکش مسترد کرتے ہوئے کہا کہ اگر صدر گئے تو پھر وزیراعظم، حکومت اور اسمبلیاں بھی جائیں گی۔ وزیراعظم گیلانی کا کہنا ہے کہ سابق صدر فاروق لغاری نے محترمہ بے نظیر بھٹو کی حکومت ختم کر کے سرائیکی خطہ پر بے وفائی کا جو داغ لگایا تھا وہ صدر کے ساتھ رخصت ہو کر وہ داغ دھو دیں گے۔ صدر زرداری اور وزیراعظم گیلانی کسی بھی سازش کے مقابلہ کیلئے تیار ہیں، وہ سرنڈر کرنے کی بجائے حالات کا مقابلہ کریں گے جس کی جھلک وزیراعظم گیلانی کی قومی اسمبلی اجلاس میں تقریر صاف دکھائی دے رہی تھی۔ ذرائع کو یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ وزیراعظم گیلانی نے صدر زرداری اور پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کو یقین دہانی کرائی ہے کہ وہ ایوان صدر کے خلاف کسی قسم کی سازش میں وزارت عظمیٰ کے عہدے کو آڑے نہیں آنے دیں گے۔ وزیراعظم گیلانی سمجھتے ہیں کہ وہ پیپلزپارٹی اور صدر زرداری کی وجہ سے ایوان وزیراعظم بیٹھے ہیں، زرداری کی ایوان صدر سے کسی سازش کے تحت رخصتی کی صورت میں ان کا وزیراعظم رہنا محترمہ بے نظیر بھٹو، صدر زرداری، بلاول بھٹو اور پیپلزپارٹی سے غداری ہوگی جس کے وہ کسی صورت میں مرتکب نہیں ہو سکتے۔ اوصاف ذرائع کے مطابق وزیراعظم گیلانی پیپلزپارٹی اور محترمہ بے نظیر بھٹو کا وہ احسان چکانا چاہتے ہیں جب سابق صدر پرویز مشرف اور محترمہ بے نظیر بھٹو کے درمیان جولائی، اگست 2007ء میں دبئی میں ملاقات ہوئی اور مل کر چلنے کی بات چیت چل رہی تھی تو محترمہ بے نظیر بھٹو نے جنرل پرویز مشرف سے اپنی گفتگو کا آغاز اس بات سے کیا تھا کہ جنرل صاحب ہمارا بندہ (یوسف رضا گیلانی) آپ نے پانچ سال سے جیل میں ڈال رکھا ہے ہم آپ سے کیا بات کریں۔ پیپلزپارٹی کے سینئر وائس چیئرمین گیلانی اڈیالہ جیل میں بند ہیں پہلے آپ انہیں رہا کریں پھر اگلی بات ہوگی۔ جس کے بعد یوسف رضا گیلانی کی رہائی ممکن ہوئی تھی۔ وزیراعظم گیلانی محترمہ کے اس احسان کو نہیں بھولے اور زرداری کی طرف سے وزیراعظم بنائے جانے پر بھی ان کے احسان مند ہیں۔ ان وجوہات کی بنیاد پر وزیراعظم گیلانی نے کسی قسم کی بے وفائی یا قیادت سے غداری کی بجائے صدر مملکت کا مکمل ساتھ دینے کا فیصلہ کیا ہے

Comments are closed.