پنجاب یونیورسٹی میں یوم حسین علیہ السلام کے موقع پر جماعت اسلامی کے غنڈوں کی دہشت گردی، 15 امامیہ طلبہ زخمی، 3 روزہ سوگ کا اعلان

Posted: 22/12/2011 in All News, Breaking News, Local News, Pakistan & Kashmir, Religious / Celebrating News

پنجاب یونیورسٹی لاہور میں یوم حسین ع کے انعقاد کے حوالے سے امامیہ طلبہ نے تمام ضروری کارروائی کی ہوئی تھی اور یونیورسٹی کے وائس چانسلر سے باقاعدہ پروگرام کا اجازت نامہ لیا گیا تھا مگر گزشتہ رات سے ہی امامیہ طلبہ کو جمعیت کے غنڈوں کی جانب سے دھمکیاں مل رہی تھیں۔ امامیہ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن پنجاب یونیورسٹی کی جانب سے آج (جمعرات) امام حسین ع کو خراج عقیدت پیش کرنے اور اُمت مسملہ کو وحدت کا پیغام دینے کے حوالے سے یوم حسین ع کا انعقاد کیا جانا تھا۔ آج صورتحال اس وقت خراب ہوئی جب اسلامی جمعیت طلبہ کے ڈیڑھ سو سے زائد غنڈے پروگرام کو ثبوتاژ کرنے کیلئے پنجاب یونیورسٹی کے گراونڈ میں جمع ہونا شروع ہو گئے اور امامیہ طلبہ کو یونیورسٹی کے گیٹ نمبر دو پر روکنے کی کوشش کی۔ امامیہ طلبہ کی جانب کوشش کی گئی کہ معاملات خراب نہ ہوں اور افہام و تفہیم سے معاملہ حل ہو جائے، مگر اسلامی جمعیت کے طلبہ کی زبان پر ایک جملہ تھا کہ ہم یہ پروگرام کسی صورت نہیں ہونے دیں گے، پروگرام کرانے کے اصرار پر جمیت کے غنڈوں نے ہوائی فائرنگ شروع کر دی اور امامیہ طلبہ پر پھتراؤ شروع کر دیا، جس کے نتیجے میں دس سے زائد امامیہ طلبہ زخمی ہو گئے۔ 
زخمی ہونے والوں میں سابق مرکزی صدر آئی ایس او عارف حسین قمبری بھی شامل ہیں۔ اسلامی جمعیت کے غنڈوں کی درندگی اس وقت مزید دیکھنے میں آئی، جب جناح اسپتال میں زخمیوں کو داخل کرایا جا رہا تھا کہ ایک بار پھر جمعیت کے دو سو سے زائد غنڈوں نے جھتے کی شکل میں اسپتال کے باہر کھڑے امامیہ طلبہ پر دھاوا بول دیا، جس کے نتیجے میں سابق مرکزی صدر سید فرحان حیدر زیدی، شیخ سہیل، عمار آغا سمیت مزید پانچ افراد زخمی ہو گئے۔  سابق مرکزی آئی ایس او ناصر عباس شیرازی نے بتایا کہ یوم حیسن ع کے حوالے سے امامیہ طلبہ نے تمام ضروری کارروائی کی ہوئی تھی اور یونیورسٹی کے وائس چانسلر سے باقاعدہ پروگرام کا اجازت نامہ لیا گیا تھا، مگر گزشتہ رات سے امامیہ طلبہ کو جمعیت کے غنڈوں کی جانب سے دھمکیاں مل رہی تھیں، ناصر عباس شیرازی کا کہنا تھا کہ انہوں نے متوقع صورتحال کے پیش نظر جماعت اسلامی کے مرکزی رہنماء لیاقت بلوچ کو فون کیا اور تمام صورتحال پر تبادلہ خیال کیا، جس پر لیاقت بلوچ نے انہیں اسلامی جمعیت طلبہ کے مرکزی رہنما سے بات کرنے اور یوم حسین ع کے پروگرام میں خلل پیدا نہ ہونے کی یقین دہانی کرائی تھی، اُن کا کہنا تھا کہ اسلامی جمعیت کے اس اقدام کے خلاف آج شام چار بجے ملک کے تمام بڑے شہروں پریس کانفرنسز کی جائیں گے اور احتجاجی مظاہرے کئے جائیں گے۔ آئی ایس او پاکستان نے اس واقعہ پر تین روزہ سوگ کا بھی اعلان کیا ہے۔   عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ پروگرام سے ایک رات قبل ہی جمعیت نے جان بوجھ کر اُسی گراونڈ میں اور اُسی وقت شان صحابہ کے نام سے ایک اور پروگرام کے پوسٹرز لگا دیئے، جس کا مقصد یوم حسین ع کے پروگرام کو روکنا تھا

Comments are closed.