برطانوی خواتین کی اکثریت کا پہلا جنسی تجربہ کم عمری میں ہوجاتا ہے

Posted: 16/12/2011 in All News, Articles and Reports, Educational News, Survey / Research / Science News, USA & Europe

لندن :  ہر چار میں سے ایک سے زائد برطانوی خواتین کا پہلا جنسی تجربہ 16 سال سے کم عمر میں ہوا جس کی شرح سابقہ نسل سے بہت زیادہ ہے۔ اس امر کا اظہار اعدادوشمار میں کیا گیا۔ہیلتھ سروے فار انگلینڈ کے اعدادوشمار کے مطابق 16سے24سال عمر کی29فیصد خواتین کا پہلی بار جنسی تجربہ ان کی رضامندی کی عمر سے قبل ہوا ۔ اس کے برعکس اس عمر کے مردوں میں یہ شرح22فیصد ہے۔2010ء کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ جنسی رویئے نسل در نسل تبدیل ہو گئے ہیں جبکہ وقت گزرنے کے ساتھ 16سال سے کم عمر میں پہلے جنسی تجربے سے گزرنے والی خواتین کی تعداد میں اضافہ ہو گیا ہے۔55سے69سال عمر کے صرف15فیصد مردوں اور 4 فیصد خواتین کا کہنا تھا کہ ان کا پہلا جنسی تجربہ 16سال سے کم عمر میں ہوا۔اس کے برخلاف 45 سے 54سال عمر کے18 فیصد مردوں اور10فیصد خواتین نے 16سال سے کم عمری میں پہلا جنسی تجربہ کیا۔ایسے مرد وخواتین جن کی عمریں اس وقت 35سے44سال عمر کے درمیان ہیں ان میں سے 22 فیصد مردوں اور17فیصد خواتین نے اپنا پہلا جنسی تجربہ16 سال سے کم عمری میں کیا۔ رپورٹ کے مطابق 16 سے 24 سال عمر کے مردوزن نے 13 یا زائد سیکس پارٹنر بدلے۔ تاہم اسی ایج گروپ کے 32 فیصد مرد اور 26 فیصد خواتین نے اس پیریڈ میں جنسی زندگی شروع نہ کرنے کا بھی اظہار کیا۔ اس کے علاوہ تمام ایج گروپس میں ایک مرد نے تمام زندگی میں اوسطاً 11.3 فیصد خواتین سے سیکس کیا جبکہ خواتین میں یہ شرح 6.7 فیصد رہی۔دریں اثنا سیکس ٹوڈے رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ بالغان میں موٹاپے کی شرح 1993ء کے بعد سے بلند ترین سطح پر ہے۔ رپورٹ کے مطابق 2010ء میں 26فیصد مر دوخواتین موٹے ہیں جوکہ1993 ء میں 13فیصد تھی ۔ دوسری جانب مجموعی طور پر 16فیصد مردوں اور 17فیصد خواتین میں دمہ کی تشخیص ہوئی ہے۔

Comments are closed.