آل سعود کے خلاف شیعہ و سنی راہنماؤں کی احتجاجی کال

Posted: 15/12/2011 in All News, Important News, Saudi Arab, Bahrain & Middle East

رپورٹ کے مطابق 60 قانوندانوں کے حالیہ بیان نے آل سعود کی طرف سے کھڑی کی گئی خوف کی دیوار توڑ دی اور واضح ہوگیا کہ الشرقیہ کے علاقے میں اٹھنے والے مطالبات نہ صرف پوری قوم کو مطالبات ہیں بلکہ ان مطالبات میں روز بروز اضافہ بھی ہورہا ہے۔ سعودی عرب میں اصلاح پسندوں نے ایک بیان جاری کرکے آل سعود کی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ بعض اصلاح پسندوں کو سنائی گئی سزائیں فورا منسوخ کرے اور القطیف میں تشدد جاری رکھنے سے باز رہے۔ انھوں نے سعودی عرب خاص طور پر منطقۃالشرقیہ میں ہونے والی تشدد آمیز کاروائیوں کے بارے میں غیرجانبدارانہ تحقیقات کا بھی مطالبہ کیا۔ قانوندانوں کے اس بیان نے آل سعود کو حیرت زدہ کردیا کیونکہ اس بیان پر شیعہ اور سنی مفکرین کے دستخط موجود ہیں بلکہ اس میں بیان ہونے والے مطالبات بھی بالکل واضح تھے اور اب سنی مفکرین اور راہنماؤں نے آئندہ جمعہ کو ملک گیر احتجاجی مظاہروں اور پرامن دھرنوں کی دعوت دی ہے جس سے سعودی عرب میں عوامی تحریک ملک گیر ہونے کی نوید مل رہی ہے۔

Comments are closed.