البصیرہ کے زیراہتمام ’’احیائے فکر دینی میں علامہ اقبال رہ اور استاد مطہری کا کردار‘‘ سیمینار

Posted: 22/11/2011 in All News, Articles and Reports, Educational News, Iran / Iraq / Lebnan/ Syria, Local News, Pakistan & Kashmir, Religious / Celebrating News

سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے مولانا محمد خان شیرانی نے کہا کہ اسلام کا نظام معیشت ہی دنیا میں عادلانہ نظام کی ضمانت ہے۔ دوسرے مقررین کا کہنا تھا کہ پاکستان میں اجتہاد کی بحث کو نظری نہیں رہنا چاہیے بلکہ قومی اسمبلی کو اس کا نمائندہ ادارہ ہونا چاہیے۔  اشتراکی اور سرمایہ دارانہ نظام ناکام ہو چکے ہیں، اسلام کا نظام معیشت ہی دنیا میں عادلانہ نظام کی ضمانت ہے، یہی علامہ اقبال رہ اور استاد مرتضٰی مطہری کے افکار کا حاصل ہے۔ ان خیالات کا اظہار چئیرمین اسلامی نظریاتی کونسل مولانا محمد خان شیرانی نے البصیرہ کے زیر اہتمام ایام اقبال رہ کی مناسبت سے منعقد ہونے والے سیمینار ’’احیائے فکر دینی میں علامہ اقبال رہ اور مرتضٰی مطہری رہ کا کردار‘‘ سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔  تقریب کی دوسری نشست کے صدر پروفیسر فتح محمد ملک ریکٹر اسلامی یونیورسٹی نے سامعین سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آج اقبال کا خواب پورا ہونے کا وقت آچکا ہے، آج سرمایہ دارانہ نظام آخری ہچکیاں لے رہا ہے۔ ہمیں اتحاد امت کی جتنی ضرورت آج ہے اس سے پہلے کبھی نہ تھی، یہی علامہ اقبال کے دل کا درد ہے۔ ہم بنیادی باتوں اور فروعی چیزوں میں فرق کرنے سے قاصر ہیں۔  تقریب کے مہمان خصوصی ڈاکٹر سہیل عمر نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مرتضی مطہری رہ نے ایرانی دانشوروں کی جدید نسل کو اقبال رہ کی افکار سے متعارف کرایا، جبکہ ڈاکٹر فرید پراچہ نائب قیم جماعت اسلامی نے تقریب کے دوران علامہ اقبال اور مرتضٰی مطہری کی فکری مطابقت کا حوالہ دیتے ہوئے کہا علامہ اقبال، مرتضیٰ مطہری اور علامہ مودودی نے معذرت خواہانہ رویے کو ترک کرکے جرات مندی کی روش کو اپنانے کا درس دیا۔ آج اسلامی بیداری انہی تعلیمات کا ثمرہ ہے۔ صدر نشین البصیرہ و اخوت ریسرچ اکادمی اور اس سیمینار کے میزبان ثاقب اکبر نے دنیا میں تیزی پیدا ہونے والی تبدیلیوں کے تناظر میں بات کرتے ہوئے کہا کہ مسلمان دانشوروں کی ذمہ داری ہے کہ عالمی سطح پر پیدا ہونے والے تہذیبی خلا کو اپنی دینی دانش سے پر کریں، جس کے لیے علامہ اقبال رہ اور استاد مرتضی مطہری کی روش سے استفادہ کیا جا سکتا ہے۔  پروفیسر احسان اکبر نے موجودہ صدی کو اقبال رہ کی صدی قرار دیا، تقریب سے ڈاکٹر محمد طفیل، ڈاکٹر عبدالرؤف ظفر، ڈاکٹر شہزاد اقبال شام، ڈاکٹر دوست محمد، ڈاکٹر نثار ہمدانی، ڈاکٹر سجاد استوری، خواجہ شجاع عباس، مولانا علی عباس کے علاوہ دیگر کئی مقررین نے خطاب کیا۔ اس پروگرام میں ملک بھر سے آئے ہوئے دانشوروں، یونیورسٹی اساتذہ اور اسکالرز کے علاوہ معززین شہر اور دیگر علاقوں سے آئے ہوئے افراد نے بھی شرکت کی۔ واضح رہے کہ البصیرہ کے زیراہتمام منعقد ہونے والے اس سیمینار کا مقصد علامہ اقبال رہ اور مرتضٰی مطہری رہ کے افکار کے ذریعے مغرب کی تہذیبی یلغار کا مقابلہ کرنا ہے

Comments are closed.